صفحہ اول / اردو ادب / جواب شکوہ بند نمبر 14 عرفان صادق

جواب شکوہ بند نمبر 14 عرفان صادق

کون ہے تارکِ آئینِ رسولِ مُختار؟

مصلحت وقت کی ہے کس کے عمل کا معیار؟
کس کی آنکھوں میں سمایا ہے شعارِ اغیار؟
ہو گئی کس کی نگہ طرزِ سَلَف سے بیزار؟
قلب میں سوز نہیں، روح میں احساس نہیں
کچھ بھی پیغامِ مُحمّدﷺ کا تمہیں پاس نہیں

⭕کتاب: بانگِ درا
نظم: جوابِ شکوہ
بند نمبر 14

♨مشکل الفاظ:
تارک۔۔۔چھوڑنے والا
آئینِ رسولِ مختار۔۔۔شریعتِ محمدیﷺ
مصلحت۔۔۔وقتی بھلائی
معیار۔۔۔پیمانہ
سمایا۔۔۔بسا ہوا
نگہ۔۔۔نظر
طرزِ سَلَف۔۔۔بزرگوں کے طور طریقے
بیزار۔۔۔اُکتایا ہوا
قلب۔۔دل،سوز۔۔۔تڑپ
پاس۔۔۔لحاظ

💢مفہوم:
ذرا یہ بتاؤ کہ شریعتِ محمّدیﷺ کے اصولوں سے روگردانی کرنے والا کون ہے؟ کس نے وقتی منفعت کی خاطر اپنے دین و ایمان کو بیچ کے غیر مسلموں کے شعائر کو اپنا لیا ہے؟ کس کا دل اپنے بزرگوں کی اقدار و روایات سے بیزار ہو چکا ہے؟
حقیقت یہ ہے کہ وہ تم لوگ ہی ہو جن کے دل سوز سے خالی ہو چکے۔۔جن کی روحوں میں اسلام پر عمل پیرا ہونے کا شعور نہیں رہا اور جنہوں نے پیغامِ محمّدﷺ کا بھی کچھ لحاظ نہ کیا اور ان کی تعلیمات کو بُھلا کر اپنی مَن مانی کی۔

متعلقہ محمد نعیم شہزاد

.......................... محمد نعیم شہزاد ایک ادبی، علمی اور سماجی شخصیت ہیں۔ لاہور کے ایک معروف تعلیمی ادارہ میں انگریزی زبان و ادب کی تعلیم دیتے ہیں۔ اردو اور انگریزی دونوں زبانوں میں نظم اور نثر نگاری پر قادر ہیں۔ ان کی تحاریر فلسفہ خودی اور خود اعتمادی کو اجاگر کرتی ہیں اور حسرت و یاس کے موسم کو فرحت و امید افزاء بہاروں سے ہمکنار کرتی ہیں۔ دین اسلام اور وطن کی محبت ان کی روح میں بسی ہے۔ اسی جذبے کے تحت ملک و ملت کی تعمیر و ترقی میں پیش پیش رہتے ہیں۔

تجویز کردہ

نوائے اقبال (2) از عرفان صادق

کتاب۔بانگ درا نظم ۔ظریفانہ نظم نمبر۔ 2 لڑکیاں پڑھ رہی ہیں انگریزی ڈھونڈ لی قوم …

جواب شکوہ بند نمبر 34 از عرفان صادق

دشت میں ،دامنِ کہسار میں، میدان میں ہے بحر میں، موج کی آغوش میں، طوفان …

Send this to a friend