صفحہ اول / اردو ادب / سلسلہ اقبالیات از عرفان صادق

سلسلہ اقبالیات از عرفان صادق

سلسلہ اقبالیات

از: عرفان صادق

دوعالم سے کرتی ہے بیگانہ دل کو
عجب چیز ہے ،لذتِ آشنائی!
شہادت ہے مطلوب و مقصودِ مومن
نہ مال غنیمت ، نہ کشور کشائی

♨کتاب۔۔۔۔بال جبریل
نظم۔۔۔۔طارق کی دعا

⭕مشکل الفاظ
دو عالم۔۔۔۔دونوں جہاں
لذت آشنائی ۔۔۔۔علم و معرفت کی لذت
کشور کشائی ۔۔۔سلطنت۔۔۔حکومت ۔۔۔۔زمین

💢مفہوم۔
حضرت علامہ اقبال رحمہ اللہ اس شعر میں ان لوگوں کا ذکر کرتے ہیں جو اللہ اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کی ذات کا قرب اور معرفت حاصل کر کے پھر اپنی ذات کو پہچان لیتے ہیں اس کے بعد انھیں اپنی زندگی گزارنے میں اتنا لطف اور مزہ آتا ہے کہ وہ ہر چیز سے بیگانہ ہو کر اللہ کا قُرب حاصل کرنے کے لیے اپنی ہر چیز قربان کر دیتے ہیں.اللہ اور اس سے رسول سے محبت اور اپنی معرفت ان کو وہ جذبہ ودیعت کرتی ہے کہ ان کا مطمع نظر اللہ کی راہ میں کٹ جانے کے سوا کچھ نہیں رہتا۔اللہ کی محبت مال غنیمت اور ملک وسلطنت کی طلب سے آزاد کرکے معراج بخش دیتی ہے۔

متعلقہ محمد نعیم شہزاد

.......................... محمد نعیم شہزاد ایک ادبی، علمی اور سماجی شخصیت ہیں۔ لاہور کے ایک معروف تعلیمی ادارہ میں انگریزی زبان و ادب کی تعلیم دیتے ہیں۔ اردو اور انگریزی دونوں زبانوں میں نظم اور نثر نگاری پر قادر ہیں۔ ان کی تحاریر فلسفہ خودی اور خود اعتمادی کو اجاگر کرتی ہیں اور حسرت و یاس کے موسم کو فرحت و امید افزاء بہاروں سے ہمکنار کرتی ہیں۔ دین اسلام اور وطن کی محبت ان کی روح میں بسی ہے۔ اسی جذبے کے تحت ملک و ملت کی تعمیر و ترقی میں پیش پیش رہتے ہیں۔

تجویز کردہ

نوائے اقبال شرح بانگِ درا ، نظم: عہد طفلی بند 2

تکتے رہنا ہائے وہ پہروں تلک سوئے قمر وہ پھٹے بادل میں بے آوازِ پا …

نوائے اقبال، شرح بانگِ درا (نظم: عہد طفلی بند 1)

تھے ديارِ نَو زمین و آسماں میرے لیے وسعتِ آغوشِ مادر اک جہاں میرے لیے …

Send this to a friend