صفحہ اول / بلاگرز فورم / کیا آپ افغانستان چلنا پسند کریں گے؟

کیا آپ افغانستان چلنا پسند کریں گے؟

کیا آپ افغانستان چلنا پسند کریں گے؟

محمد فہیم شاکر 

تو آئیے! افغان صوبے ہلمند کے ضلع لشکرگاہ کے شوارب ایر بیس پر چلتے ہیں
جہاں افغان طالبان کا زور دار حملہ 46 گھنٹوں بعد اختتام پذیر ہوا ہے
اس لڑائی میں کل 397 امریکی و دیگر غیر ملکی فوجی ہلاک جن میں جنگی طیاروں کے 15 پائلٹ اور 18 انجینیرز بھی شامل ہیں باقی 19 غیر ملکی زخمی ہیں، جبکہ غلام کٹھ پتلی افواج کے 260 عناصر جن میں 142 عام فوجی جبکہ 118 کمانڈوز شامل ہیں ہلاک ہوئے ہیں،
جبکہ 73 زخمی اس کے علاوہ ہیں۔ افغان فوج کے 2 ہیلی کاپٹر جبکہ بیرونی افواج کے بھی کئی جہاز ناکارہ یا جزوی منہدم ہوئے، 33 ہموی گاڑیاں جبکہ 19 M117 بکتر بند گاڑیاں تباہ، 26 رینجر پِک اپ، بیرونی افواج کے زیر استعمال 21 گاڑیاں، 7 فوجی ایمبولینس، 11 تیل کے ٹینکر، اسلحے کے ڈپو، طیاروں کی مرمت کے ورکشاپ، ریڈار سسٹم، کئی فوجی عمارتیں، کھانے کے ذخائر و دیگر لاجسٹکس بڑی تعداد میں تباہ ہوئے۔ مجموعی طور پر کئی کلومیٹر پر مشتمل شوراب ائیربیس جن میں بیک وقت 32 ہزار فوجی رہائش پذیر ہو سکتے ہیں کا 40 فیصد حصہ مکمل تباہ ہو گیا
امارت اسلامیہ کے ترجمان قاری محمد یوسف احمدی نے کہا کہ مظلوم و معصوم افغان عورتوں اور بچوں کو قتل کرنے اور گھروں کو مکینوں سمیت گرا کر ان پر بمباری کرنے کے جرم کی پاداش میں شوراب بیس پر امریکیوں کو سزا دی گئی ہے اگر انہوں نے افغانیوں پر اپنے مظالم کا سلسلہ بن نہ کیا تو ایسے تباہ مزید کن حملوں کے لیے تیار رہیں.

پومپیو حاضر ہو جو کہتا تھا کہ امریکہ پاکستان میں دہشتگردی کے اڈوں پر بھارتی حملوں کی حمایت کرتا ہے
ابے برائلر کھانے کے شوقین! اپنے ناجائز فوجی اڈوں کی رکھشا تو کر لو، پھر پاکستان کے خلاف حملوں کے بھاشن بھی دے لینا
پاکستان اپنی حفاظت کرنا خوب جانتا ہے جبھی تو کر رہا ہے.
کیا امریکہ نہیں جانتا کہ اس نے افغانستان میں کیا جملہ مظالم ڈھائے، بگرام، پل چرخی، جلال آباد، اور کابل کے واقعات کو ہم کیسے بھول جائیں؟ لہذا شوراب حملے پر امریکہ کا شور کرنا نہیں بنتا۔

متعلقہ نعیم شہزاد

.......................... محمد نعیم شہزاد ایک ادبی، علمی اور سماجی شخصیت ہیں۔ لاہور کے ایک معروف تعلیمی ادارہ میں انگریزی زبان و ادب کی تعلیم دیتے ہیں۔ اردو اور انگریزی دونوں زبانوں میں نظم اور نثر نگاری پر قادر ہیں۔ ان کی تحاریر فلسفہ خودی اور خود اعتمادی کو اجاگر کرتی ہیں اور حسرت و یاس کے موسم کو فرحت و امید افزاء بہاروں سے ہمکنار کرتی ہیں۔ دین اسلام اور وطن کی محبت ان کی روح میں بسی ہے۔ اسی جذبے کے تحت ملک و ملت کی تعمیر و ترقی میں پیش پیش رہتے ہیں۔

تجویز کردہ

کان پکڑ لیجیے ۔۔۔ از: محمد فہیم شاکر

رانا ثناء اللہ کو اینٹی نارکوٹکس فورس نے اسلام آباد سے لاہور جاتے ہوئے گرفتار …

پاکستان مخالف اتحاد کی خاموش ٹھکائی ۔۔۔ محمد فہیم شاکر

پاکستان مخالف اتحاد کی خاموش ٹھکائی  محمد فہیم شاکر مورخ کا کہنا ہے کہ ہمارے …

Send this to a friend