صفحہ اول / حامدالمجید / تخیل اور تخلیق

تخیل اور تخلیق

اکثر ایسا ہوتا ہے ہم بہت کچھ لکھنا چاہ رہے ہوتے ہیں پر کچھ لکھا نہیں جاتا جیسے ہی پیڈ کھول کے ٹائپنگ کرنے لگتے ہیں انگلیاں رک جاتی ہیں اور سوچیں جم جاتی ہیں یا تو کوئی بے چینی ہوتی ہے یا ہمارے سر پہ یہ سوار ہوتا ہے ہم نے لکھنا ہے لکھنا ہے۔۔۔

جب کہ لکھنے کا صحیح وقت وہی ہے جب الفاظ خود بخود ذہن پہ اتریں ایسا تبھی ممکن ہے جب ہم ذہن سے دباؤ ہٹائیں اور بالکل ریلکس ہو جائیں۔۔
اک اور بھی طریقہ ہے جب کچھ لکھا نہ جا رہا ہو تو کچھ پڑھ لینا چاہیے اس کا فائدہ یہ ہے کہ ہم جب پڑھتے ہیں تو سوچ کو کئی نئی راہیں ملتی ہیں پڑھتے پڑھتے نئے خیالات ابھرنے لگتے ہیں جس کے بعد انہیں قرطاس پہ بکھیرنا آسان ہوجاتا ہے۔۔۔
الفاظ زبردستی نہ لکھیں بلکہ ان کی مرضی سے لکھیں۔۔۔
جب الفاظ قلم کی نوک سے مچلتے ہوئے قرطاس پہ اترنا شروع ہوتے ہیں تو ہماری انگلیوں کے نرم و نازک پورے بھی اتنی ہی تیزی سے حرکت کرنے لگتے ہیں ایسے میں لفظوں میں کچھ الفاظ زائد یا کم رہ جاتے ہیں۔۔ جنہیں بعد میں باآسانی دور کیا جاسکتا ہے اگر ہم تحریر لکھنے کے بعد فوراً سے اپلوڈ کردیں تو تسلسل و روانی سے لکھے گئے لفظوں کی قطار میں کچھ ادھر اُدھر ہونے کی وجہ سے قاری کا تسلسل ٹوٹ جاتا ہے۔۔
تحریر میں نکھار پیدا کرنے کے لیے اسے دوسروں تک پہنچانے سے پہلے خود ایک یا دو دفعہ ایک قاری کی نظر سے پڑھیں۔۔۔۔
ہمارا ہر وہ لفظ امر ہوجاتا ہے جو ذہن سے اتر کہ قرطاس پہ آتا ہے اور دوسروں کی بصارتوں سے ہوتے ہوئے زبان پہ جاری ہوتا ہے ہمیشہ ایسا لکھیں جو فرحت قلب بنے نہ کہ اذیت قلب۔۔
خوش رہیں خوشیاں بانٹیں۔۔

متعلقہ محمد نعیم شہزاد

.......................... محمد نعیم شہزاد ایک ادبی، علمی اور سماجی شخصیت ہیں۔ لاہور کے ایک معروف تعلیمی ادارہ میں انگریزی زبان و ادب کی تعلیم دیتے ہیں۔ اردو اور انگریزی دونوں زبانوں میں نظم اور نثر نگاری پر قادر ہیں۔ ان کی تحاریر فلسفہ خودی اور خود اعتمادی کو اجاگر کرتی ہیں اور حسرت و یاس کے موسم کو فرحت و امید افزاء بہاروں سے ہمکنار کرتی ہیں۔ دین اسلام اور وطن کی محبت ان کی روح میں بسی ہے۔ اسی جذبے کے تحت ملک و ملت کی تعمیر و ترقی میں پیش پیش رہتے ہیں۔

تجویز کردہ

نوائے اقبال شرح بانگِ درا (ہمالہ بند 6)

آتی ہے ندّی فرازِ کوہ سے گاتی ہوئی کوثر و تسنیم کی موجوں کو شرماتی …

نوائے اقبال شرح بانگِ درا (ہمالہ بند 5)

جنبشِ موجِ نسیم صبح گہوارہ بنی۔۔۔ا جھومتی ہے نشہء ہستی میں ہر گل کی کلی۔۔۔! …

Send this to a friend

Hi, this may be interesting you: تخیل اور تخلیق! This is the link: https://pakbloggersforum.org/idea-and-creation/