صفحہ اول / تحریری مقابلہ: سیرت ختم الرسل صلی اللہ علیہ وسلم / حضرت محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم عالمگیر شخصیت ۔۔۔ تحریر : ساجدہ بٹ

حضرت محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم عالمگیر شخصیت ۔۔۔ تحریر : ساجدہ بٹ

تاریخ اگر ڈھونڈے گی ثانی محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم

ثانی تو بڑی چیز ہے سایہ بھی نہ ملے گا

اللہ تبارک و تعالیٰ کے پیارے محبوب حضرت محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ہمیں جو تعلیمات دیں ہم دیکھتے ہیں کہ ان کی سیرت پاک کی بدولت ہماری زندگیوں میں سکون ہی سکون ہے۔
دُنیا میں بہت سارے مجدد بڑے بڑے علماء کرام گزرے ہیں اپنے بہت سے نظریات اور قانون دے گئے ہیں لیکن اس تعلیم کا کوئی مقابلہ نہیں جو ہمارے پیارے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ہمیں دیا۔

حق و انصاف جس کی بنیاد ہو

درس ایسا پڑھاتے ہیں میرے رسول (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم)

اُن کی سیرت طیبہ سے رہنمائی نا ملتی تو یقینا ہم بھٹکے ہوؤں میں سے ہی ہوتے جیسے آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے پہلے زمانہ جاہلیت میں لوگ ہوا کرتے تھے۔
عورت کی کوئی اہمیت نہیں تھی عورت کو زندہ درگور کر دیا جاتا تھا
پھر اسلام کی آمد کے بعد عورت کو ماں بہن بیٹی بیوی کے روپ میں عزت دی۔
سبحان اللہ
قربان جاؤں اُس عظیم الشان ہستی پے الفاظ نہیں کیسے شکر گزاری کریں۔

نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی سیرت ہمارے لیے زندگی کے ہر شعبے میں ایک مُکمل رہنمائی فراہم کرتی ہے۔اس راستے پر چل کر انسان دُنیا و آخرت میں فلاح پا سکتا ہے۔
اس لیے مسلمانوں نے نبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی زندگی کے ایک ایک پہلو کو محفوظ رکھا آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی سیرت کے بارے میں اللہ تعالیٰ نے فرمایا۔

لقد کان لکم فی رسول اللہ اسوۃ حسنہ

ترجمہ: یقینا رسول اللہ کی زندگی تمہارے لیے نمونہ ہے

(احزاب 21)
حضرت عائشہ صدیقہ رض فرماتی ہیں٫
؛؛کان خُلق القران؛؛
نبی چلتے پھرتے قرآن تھے۔

آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی سیرت پر لکھنے کا سلسلہ آپ کی زندگی سے اب تک جاری ہے اور اس کے مختلف پہلوؤں پر کام ہو رہا ہے آپ کی زندگی کے بے شمار نمایاں پہلو ہیں۔
آپ نے تو زندگی کے ہر ہر پہلو کو بڑے بڑے واضح انداز میں بیان فرمایا اور عمل کر کے دکھایا آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے قول فعل اور عمل کو حدیث کہا جاتا ہے۔

آپ نے یہ کہا سدا سچ کہو

سچ کہو اور اس پر قائم رہو
کسی شخص کی سیرت کا نمایاں پہلو سچائی ہوتا ہے آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم تمام معاملات زندگی میں سچائی کا بہترین نمونہ تھے۔
آپ کے اس وصف کا اعتراف آپ کے مخالفین کو بھی تھا۔
ابو جہل نے آپ کی سچائی کا اعتراف کرتے ہوئے کہا:
"اے محمد میں تُجھے جھوٹا نہیں سمجھتا لیکن تمہاری تعلیم پر میرا دل نہیں ٹھہرتا”

آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو صادق اور امین کے لقب سے نوازا گیا آپ ہمیشہ سچ بولتے تھے اسی لیے تو دشمن بھی آپ کو سچا سمجھتے تھے۔
آپ کو مکہ میں امین کے نام سے پُکارا جاتا تھا
کافروں کو آپ سے سخت دشمنی تھی لیکن آپ کی دیانت داری پر اتنا اعتماد تھا کہ امانتیں آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے پاس رکھتے تھے

حضرت خدیجہ رض نے آپ کی دیانت داری اور بلند اخلاقی کی وجہ سے ہی آپ کے ساتھ نکاح کیا تھا۔

آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی زندگی سادگی کا کامل نمونہ تھی
رہن سہن،کھانا پینا،میل جول میں انتہائی سادہ تھے۔
آپ اپنے گھر کے کام کاج خود کر لیا کرتے تھے

نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے معاشرے کو بے مثال اصول دیئے آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے بھائی چارہ٫ہمدردی،غم گساری،دُکھ سُکھ میں شرکت،غریبوں کی مدد یتیموں کی سرپرستی،والدین کی خدمت،عورت کی عزت،ہمسائیوں کے حقوق اور رشتے داروں کے ساتھ تعلق جوڑنے کا حُکم دیا۔

آپ نے شادی اور نکاح کو آسان بنایا۔خود غرضی،نمود و نمائش،غرور و تکبر،فہاشی و عریانی،جھوٹ و غیبت اور سازشوں سے روک دیا۔
رزق حلال کا حکم دیا اساتذہ کرام اور والدین کا احترام کرنا سکھایا۔

آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی سیرت ہر لحاظ سے مکمل اور جامع ہے کوئی ایسی خوبی نہیں جو آپ کی ذاتِ اقدس میں نا ہو۔

اللہ تعالیٰ نے ارشاد فرمایا۔۔۔۔۔۔۔

ترجمہ: ہم نے تم کو سب جہانوں کے لیے رحمت بنا کر بھیجا ہے

(النبیاء 107)

اس کے علاوہ آپ کی زندگی کا ایک پہلو آپ کی شجاعت و بہادری بھی تھا کسی بھی بڑی شخصیت میں بہادری کا پہلو بہت اہمیت رکھتا ہے ۔

کفار نے آپ صلّی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ساتھ جو ظلم و ستم روا رکھا آپ نے بڑی بہادری کے ساتھ اس کا سامنا کیا۔
جنگ اُحد اور حنین میں مسلمانوں کی وقتی پسپائی کے باوجود ثابت قدم رہے۔

آج کل ہمارے ملک میں معیشت کس قدر کمزور ہے بلکہ ہم لوگ پہلے سے کمزور سے کمزور ہوتے چلے جا رہے ہیں کیوں کہ ہم نے آپ کی تعلیمات کو بھُلا دیا

آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے معاشیات کا وہ نظام دیا جو آج بھی انسانیت کا مثالی نظام ہے۔یہ سوشلزم اور سمرمایا دارانہ نظام نے معاشی دھوکہ بازی اور غربت و افلاس کے علاوہ کچھ نہیں دیا۔
سود کے شکنجے میں جکڑ کر انسانیت کو غلامی پر مجبور کر دیا گیا
آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے زکٰوۃ و صدقات کی شکل میں کمزور طبقات کو معاشی تحفظ دیا۔۔

آپ کی ذات اقدس کے بارے میں لکھنا چاہیں تو الفاظ کم پڑ جاتے ہیں آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی دی ہوئی روشنی دلوں کو منور کرتی ہے
آپ کی سیرت ہر لحاظ سے مکمل ہے زندگی کے ہر میدان میں آپ کی ذاتِ سے رہنمائی ملتی ہے خاوند سے لے کر حکمرانی تک زندگی کے ہر پہلو میں آپ نے مرد و زن کے لیے مکمل نمونہ چھوڑا ہے۔
آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے خود لوگوں کو اپنی تعلیمات پر عمل کر کے دکھایا آپ کی سیرت ہر زمانے میں اور ہے جگہ قابل عمل رہی اور آج بھی قابل عمل ہے
دُنیا میں بہت سے ایسے لوگ گزرے ہیں جنہوں نے بڑے بڑے واضح نظریات تو دیے لیکن اپنی تعلیمات کو عملی شکل نہ دے سکے اس کے برعکس آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے اپنے پیش کردہ نظریات کے مطابق معاشرہ قائم کر کے دکھا دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

متعلقہ محمد نعیم شہزاد

.......................... محمد نعیم شہزاد ایک ادبی، علمی اور سماجی شخصیت ہیں۔ لاہور کے ایک معروف تعلیمی ادارہ میں انگریزی زبان و ادب کی تعلیم دیتے ہیں۔ اردو اور انگریزی دونوں زبانوں میں نظم اور نثر نگاری پر قادر ہیں۔ ان کی تحاریر فلسفہ خودی اور خود اعتمادی کو اجاگر کرتی ہیں اور حسرت و یاس کے موسم کو فرحت و امید افزاء بہاروں سے ہمکنار کرتی ہیں۔ دین اسلام اور وطن کی محبت ان کی روح میں بسی ہے۔ اسی جذبے کے تحت ملک و ملت کی تعمیر و ترقی میں پیش پیش رہتے ہیں۔

تجویز کردہ

سنیپ چیٹ اسلامی تعلیمات کے آئینے میں

چند دن قبل کچھ پرانے دوست اکھٹے ہوئے۔ کچھ انجینیئرنگ کے سٹوڈنٹس اور کچھ ایم …

کتاب مقبول کیوں نہیں ؟ ۔۔۔ وسیم احمد

کتاب سے مراد صرف نصابی کتابیں نہیں ہیں،یہاں غیر نصابی و ادبی کتابوں کا ذکر …

Send this to a friend

Hi, this may be interesting you: حضرت محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم عالمگیر شخصیت ۔۔۔ تحریر : ساجدہ بٹ! This is the link: https://pakbloggersforum.org/muhammad-pbuh-a-global-personality/