صفحہ اول / بین الاقوامی / ہائے میرا محافظ لٹیروں سے جا ملا ۔۔۔  تحریر: عشاء نعیم

ہائے میرا محافظ لٹیروں سے جا ملا ۔۔۔  تحریر: عشاء نعیم

حال ہی میں مودی سرکار نے متحدہ عرب امارات کا دورہ کیا ‘اس دورے میں یو اے ای کے سربراہ زید النہیان نے مودی کو یواے ای کا سب سے بڑا سول ایوارڈ "آرڈر آف زید” دیا۔

اس ایوارڈ کے دینے پہ پوری امت مسلمہ تڑپ اٹھی ہے حتی کہ غیر مسلم بھی حیران ہیں اور تنقید کر رہے ہیں شاید یہ اتنی حیرت کی بات ہے کہ انڈین عوام اور مودی خود بھی حیران ہوا ہو گا ۔
بہرحال امت مسلمہ کے لئے بڑا دھچکا ہے۔
پاکستان کے چئیرمین سینیٹ نے اسی واقعہ کے تناظر میں یو اے ای کا دورہ منسوخ کردیا ہے ۔
اور خصوصاً کشمیری عوام کے لیے یہ ایسے ہی ہے جیسے کوئی زخموں پہ نمک چھڑک دے ۔
کشمیری عوام اس وقت نازک ترین حالات اور بدترین ظلم و بربریت سے گزر رہی ہے ۔بھارت نے ان کی جداگانہ حیثیت ختم کرکے وہاں کرفیو نافذ کرکے نسل کشی کرنے کے ساتھ ساتھ کشمیر لڑ کیوں کو اغوا کیا جا رہا ہے ۔وہاں باقاعدہ کشمیری لڑکیوں کی ہندو لڑکوں سے شادی کی تحریک چلی ہے "کشمیری بہو لاؤ ” ۔کشمیر کی سڑکیں کشمیریوں کے لہو سے بھری ہیں۔ وہ کٹ رہے ہیں انھیں اندھا کیا جارہا ہے عزتیں لٹ رہی ہیں انسانی تاریخ کا بد ترین ظلم و ستم ڈھایا جارہا ہے ۔

اور وہ جو کسی صلاح الدین ایوبی ‘کسی ابن قاسم ‘کسی معتصم بااللہ کی منتظر تھے انھوں نے دیکھا ایک مسلمان حکمران اس ظالم ‘دہشت گرد اور دنیا کے بدترین انسان کو ایوارڈ دیتا ہے ایسا کبھی تاریخ میں نہیں ہوا۔ مجھے مثال دینے کے لئے بھی زید النہیان کے لیے کوئی نام نہیں مل رہا ۔مسلمانوں کی تاریخ کو اور عربوں کے نام کو داغدار کردیا اس شخص نے ۔
عرب ممالک کے بارے میں سنا ہے بہت پیسہ ہے بہت طاقت ور ہیں لیکن افسوس یہ پیسہ مسلمان بیٹیوں کی عزت بچانے کی بجائے عزت کے لٹیروں کو انعام دینے پر استعمال ہو رہا ہے۔
پوری اسلامی تاریخ اس قسم کے واقعے سے خالی ہے ۔
زیدالنہیان صاحب امت مسلمہ کو جواب دیں آپ مودی کی کس بات سے اتنا خوش ہو گئے؟
مودی کی بھارت میں مسلمانوں کے ذبح کرنے کی پالیسی سے ؟
کشمیر کی جداگانہ حیثیت ختم کرنے سے؟
کشمیر یوں کو ذبح کرنے سے ؟
کشمیری ماؤں بہنوں کی عزتیں لوٹنے سے ؟
کشمیری لڑکیوں کو اٹھا کر لے جانے سے ؟
کشمیری لڑکیوں کی شادیاں ہندو لڑکوں سے کروانے سے ؟
"گھر واپسی”تحریک کے تحت مسلمانوں کو ہندو بنانے سے ؟
پاکستان میں دہشت گردی کروا کر معصوم مسلمان پاکستانیوں کو شہید کرنے سے ؟
پوری دنیا میں مسلمانوں کے خلاف پروپیگنڈہ کرنے سے ؟
یا فلسطین کے مسلمانوں پہ ظلم و ستم ڈھانے کے لئے اسرائیل کی مدد کرنے سے ؟
بتائیے گا ضرور ۔
شاید آپ کو کفار اور خاص طور پر مسلمانوں پہ ظلم ڈھاتے کفار بے انتہا پسند ہیں ۔
لیکن ہم آپ کو یاد دلا دیں کہ آپ مسلمان حکمران ہیں اس وقت امت مسلمہ پہ کڑا وقت ہے ۔ہر طرف ظلم کی آندھی چلی ہوئی ہے ہر جگہ مسلمانوں پہ یہ زمین تنگ کردی گئی ہے خاص طور پہ برما’بھارت ‘کشمیر اور فلسطین میں۔ مسلمانوں کو کہیں امان حاصل نہیں ۔غیر مسلم ممالک میں ان پہ اسلام مخالف پا بندیاں لگائی گئی ہیں ۔کہیں برقعے پہ پابندی تو کہیں اذان پہ ۔
اس وقت ہونا یہ چاہیے تھا تمام مسلمان ممالک کے سربراہان مل بیٹھتے اور سارے کفار کے خلاف ایسی پالیسی مرتب کرتے کہ ان کی اکڑ ٹوٹ جاتی اور وہ گھٹنے ٹیکنے پہ مجبور ہوجاتے ظلم و ستم بند کرتے عزتیں محفوظ ہوتیں ۔لیکن افسوس اور باعث شرم ہے آپ کا مسلمانوں کے قاتل اور عزتوں کے لٹیرے کو انعام دینا پوری امت کو ایسا دکھ دے گیا ہے جو تاریخ میں آپ کے سیاہ کارنامے کے طور پہ یاد رکھا جائے گا ۔
کاش آپ مودی سے مطالبہ کرتے کہ اپنی فوجوں کو کشمیر سے فوری طور پر نکالو ورنہ نتائج کے ذمہ دار خود ہو گے ۔کاش آپ کہتے ایک بھی امت کی بیٹی پہ نظر ڈالی تو وہ آنکھیں نکال لوں گا اور بھارت کو صفحہ ہستی سے مٹادوں گا ۔
کاش آپ وہ معتصم بااللہ کی تاریخ دہراتے جس نے کسی غیر مسلم ملک میں جب کافر نے مسلمان بیٹی کی چادر کھینچی تو اس بہن نے معتصم کے نام کی دہائی دی ‘جس پہ معتصم نے اس ملک پہ حملہ کر کے اس کی پکار کا جواب دیا ۔
کاش آپ حجاج بن یوسف ہی ہوتے جس نے سندھ کی بیٹی کی پکار پہ اپنے بھتیجے محمد بن قاسم کو لاکھوں کے مقابل بس ساٹھ ہزار لشکر دے کر بھیج دیا ۔

لیکن آپ نے تو مودی کو تھپکی دی ہے ۔انعام دیا ہے جیسے آپ نے ہی کروایا ہو سب۔
امت کا مطالبہ ہے آپ یہ ایوارڈ واپس لیں ۔ورنہ قیامت کے دن سارے ظلم کا حساب آپ بھی دیں گے ۔
پکار رہیں تھیں ابن قاسم کو بیٹیاں کشمیر کی
جسے سمجھا تھا محافظ وہ لٹیروں سے جا ملا

متعلقہ محمد نعیم شہزاد

.......................... محمد نعیم شہزاد ایک ادبی، علمی اور سماجی شخصیت ہیں۔ لاہور کے ایک معروف تعلیمی ادارہ میں انگریزی زبان و ادب کی تعلیم دیتے ہیں۔ اردو اور انگریزی دونوں زبانوں میں نظم اور نثر نگاری پر قادر ہیں۔ ان کی تحاریر فلسفہ خودی اور خود اعتمادی کو اجاگر کرتی ہیں اور حسرت و یاس کے موسم کو فرحت و امید افزاء بہاروں سے ہمکنار کرتی ہیں۔ دین اسلام اور وطن کی محبت ان کی روح میں بسی ہے۔ اسی جذبے کے تحت ملک و ملت کی تعمیر و ترقی میں پیش پیش رہتے ہیں۔

تجویز کردہ

چڑیا چھپکلی اور کشمیر ملین مارچ

مسئلہ کشمیر پچھلی پون صدی سے وہ سلگتا آتش فشاں ہے جو دنیا کے امن …

کشمیر ملین مارچ، آخر کیوں؟

آج جمعہ کا دن ہے 18 اکتوبر اور آج کا دن وہ دن ہے جب …

Send this to a friend

Hi, this may be interesting you: ہائے میرا محافظ لٹیروں سے جا ملا ۔۔۔  تحریر: عشاء نعیم! This is the link: https://pakbloggersforum.org/my-custodian-favers-my-enemy/