صفحہ اول / عرفان صادق / نوائے اقبال (5) شرح بانگ درا

نوائے اقبال (5) شرح بانگ درا

تعلیم مغربی ہے بہت جرات آفریں
پہلا سبق ہے، بیٹھ کے کالج میں مار ڈینگ
بستے ہیں ہند میں جو خریدار ہی فقط
آغا بھی لے کے آتے ہیں اپنے وطن سے ہینگ
میرا یہ حال، بوٹ کی ٹو چاٹتا ہوں میں
ان کا یہ حکم! دیکھ مرے فرش پہ نہ رینگ
کہنے لگے اونٹ ہے بھدا سا جانور
اچھی ہے گاۓ رکھتی ہے کیا نوکدار سینگ

📚کتاب: بانگِ درا
نظم : ظریفانہ # 5

📝مشکل الفاظ:
جرات آفریں: بہادر بنا دینا۔ مار ڈینگ: شیخی مارنا۔آغا: افغانستان کے پماندہ علاقہ کے خان

🖋مفہوم: علامہ اقبال فرماتے ہیں مغرب کی تعلیم انتہائی جرات انگیز ہوتی ہے اور پہلا سبق جو کسی طالبعلم کو کالج میں داخلے کے بعد ملتا ہے وہ شیخی بھگارنے کا ہوتا ہے۔
ہندوستان تو ایک ایسی منڈی کی طرح ہوتا ہے جہاں اشیاۓ ضروریہ بھی باہر سے آکر فروخت ہوتی ہیں اس ملک میں تو اتنی بھی صلاحيت نہیں کہ صنعتی سطح پر اپنے لیۓ ضرورت کا سامان تیار کر لے۔ یہاں کی حالت تو اسقدر ابتر ہے کہ ہینگ جیسی معمولی چیز بھی درکار ہو تو وہ بھی کابل جیسے پسماندہ علاقے کے لوگ یہاں لے کر آتے ہیں۔
علامہ اقبال غلامانہ ذہنیت کا اظہار کرتے ہوۓ کہتے ہیں کہ ہم تو اپنے آقاٶں کی خوشامد میں اس حد تک بڑھ جاتے ہیں کہ ان کے جوتے چاٹنے سے بھی نہیں شرماتے اور وہ ہم سے اس قدر متکبرانہ سلوک کرتے ہیں کہ بوٹ چاٹتے بھی فرش خراب ہونے کا طعنہ دیتے ہیں آخری شعر میں شاعر مشرق نے اونٹ اور گاۓ کے دو کردار پیش کیۓ اونٹ سے مراد مسلمان جبکہ گاۓ سے مراد ہندو لیتے ہیں۔انگریز مسلمانوں کی تضحیک کرتے ہیں کہ مسلمان عرب سے آۓ ہیں اور وہاں کا اونٹ کار آمد ہونے کے باوجود بھدا ہے جبکہ ہندو گاۓ کی پرستش کرتے ہیں اس لیۓ انہیں گاۓ سے تشبیہ دی گٸ ہے۔

متعلقہ محمد نعیم شہزاد

.......................... محمد نعیم شہزاد ایک ادبی، علمی اور سماجی شخصیت ہیں۔ لاہور کے ایک معروف تعلیمی ادارہ میں انگریزی زبان و ادب کی تعلیم دیتے ہیں۔ اردو اور انگریزی دونوں زبانوں میں نظم اور نثر نگاری پر قادر ہیں۔ ان کی تحاریر فلسفہ خودی اور خود اعتمادی کو اجاگر کرتی ہیں اور حسرت و یاس کے موسم کو فرحت و امید افزاء بہاروں سے ہمکنار کرتی ہیں۔ دین اسلام اور وطن کی محبت ان کی روح میں بسی ہے۔ اسی جذبے کے تحت ملک و ملت کی تعمیر و ترقی میں پیش پیش رہتے ہیں۔

تجویز کردہ

گھر کی خاطر

آج میں بہت غمگین تھا کیوں کہ ہم نے بیرونی دباؤ کی خاطر ، ہمیں …

تنظیمی کلچر

زیادہ دن پرانی بات نہیں ایک لنڈے کے کامریڈ سستے انقلابی کو سمجھا رہا تھا …

Send this to a friend

Hi, this may be interesting you: نوائے اقبال (5) شرح بانگ درا! This is the link: https://pakbloggersforum.org/nawai-iqbal-5/